**K**PK Golden Sky**A**

جب اس کے رخ پہ حیا کا غبار پھیلا تھا

View previous topic View next topic Go down

جب اس کے رخ پہ حیا کا غبار پھیلا تھا

Post  anaarkali2011 on Wed Apr 13, 2011 8:34 am

غزل


جب اس کے رخ پہ حیا کا غبار پھیلا تھا
تو میرے دل میں وفا کا غبار پھیلا تھا

حریمِ دل میں کسی کو جگہ نہ مل پائی
نظر میں تیری ادا کا غبار پھیلا تھا

نہ دیکھ پائے ہم اک دوسرے کے چہرے کو
ہمارے گرد انا کا غبار پھیلا تھا

بھٹک کے لوگ چلے آئے دور منزل سے
کہ راستوں میں بلا کا غبار پھیلا تھاجہاں پہ آج ہے خاموشیوں کا راج وہاں
کبھی کسی کی صدا کا غبار پھیلا تھا

جہاں پہ ناز تھا لوگوں کو اپنی عظمت پر
وہاں بھی تیری عطا کا غبار پھیلا تھا

فصیح دل میں تمنا تھی تیری الفت کی
لبوں پہ حرفِ دعا کا غبار پھیلا تھا
avatar
anaarkali2011
JUNIOR MEMBER
JUNIOR MEMBER

Posts : 81
Join date : 2011-03-05
Age : 31
Location : Faisalabad-Pakistan

View user profile

Back to top Go down

View previous topic View next topic Back to top


 
Permissions in this forum:
You cannot reply to topics in this forum